18

نصیرآباد پولیس کی کھلی کچہری میں رقت آمیز مناظر ماؤں کی چیخ وپکار بیٹے کی گردن کاٹنے والے ملزمان تاحال آزاد ہیں ماں کی شکوہ

ڈیرہ مراد جمالی (نامہ نگار)
نصیرآباد پولیس کی کھلی کچہری میں رقت آمیز مناظر ماؤں کی چیخ وپکار بیٹے کی گردن کاٹنے والے ملزمان تاحال آزاد ہیں ماں کی شکوہ جبکہ شہید ٹیچر محمد رفیق عمرانی کے قاتلوں کی عدم گرفتاری پرورثاء کا احتجاج ایس ایس پی نصیرآباد کا قاتلوں کی عدم گرفتاری پر بر ہمی کا اظہار سات روز میں تمام ملزمان کی گرفتاری کا حکم تفصیلات کے مطابق آئی جی پولیس بلوچستان محسن حسن بٹ کی خصوصی ہدایت پر بلوچستان کے دیگر اضلاع کی طرح نصیرآباد کے صدر پولیس تھانہ ڈیرہ مراد جمالی میں ایس ایس پی نصیرآباد عرفان بشیر کی سربراہی میں کھلی کچہری کا انعقاد کیا گیا جس میں اے ایس پی ڈی ایس پیز سمیت تمام تھانوں کے ایس ایچ اوز تفتیشی عملہ سمیت دیگر پولیس آفیسران سیاسی نمائندوں شہری ایکشن کمیٹی کے عہدیدار سمیت عام عوام کی بڑی تعداد نے شرکت کی پولیس سے درپیش مسائل بیان کیئے گئے نصیرآباد پولیس کی کھلی کچہری میں رقت آمیز مناظرماؤں کی چیخ وپکار میر حسن پولیس تھانہ کے علاقے سے تعلق رکھنے والی خاتون مائی پری گل نے روتے ہوئے بتایاکہ ملزمان نے میرے جواں سال بیٹے کی گردن کاٹ دی لیکن اب تک مرکزی ملزم گرفتار نہیں ہوسکے ہیں

صدر پولیس تھانہ کے علاقے سے تعلق رکھنے والی خاتون امام زادی نے روتے ہوئے بتایاکہ نامعلوم چوروں نے میرے سامنے میرے بیٹے کو زدکوب کیا موٹر سائیکل چھین کر فرار ہوگئے لیکن مقدمہ درج نہیں کیا گیا ہے خان کوٹ پولیس تھانہ کے علاقے سے تعلق رکھنے والے شہید ٹیچر محمد رفیق عمرانی کے بھائی نے روتے ہوئے عدم گرفتاری کا شکوہ کیا

مائی ہزاری خاتون نے بھی موٹر سائیکل کی عدم بر آمدگی پر بتایاکہ کہ قرآن پاک علاقے میں گھومایا گیا لیکن پولیس نے موٹرسائیکل کی بر آمدگی پر تعاون نہیں کیا ہے جبکہ ایری گیشن کالونی مسجد کے خطیب مولانا دواد خان پیچوہانے شکایات کرتے ہوئے کہاکہ ہمار ی دو مساجد سے دوموٹر سائیکل چوری ہوئے ہیں لیکن مولوی حضرات کے ساتھ پولیس نے تعاون نہیں کیا ہے ایس ایس پی نصیرآباد عرفان بشیر نے بر ہمی کا اظہارکرتے ہوئے کھلی کچہری میں پیش ہونے والے مسائل سات روز میں تمام ملزمان کی گرفتاری کا حکم دے دیا ہے جبکہ سیاسی شہری ایکشن کمیٹی کے حافظ سعید بنگلزئی میر غلام نبی عمرانی ڈاکٹر غلام اسحاق بگٹی سمیت دیگر نمائندگان نے پولیس کی کارکردگی پر اطمیان کا اظہار کرتے ہوئے سہولیات کی فراہمی کا مطالبہ کیا کھلی کچہری سے خطاب کرتے ہوئے ایس ایس پی نصیرآباد عرفان بشیرنے کہاکہ ملزمان کی عدم گرفتاری فرائض میں غفلت دکھانے والے ڈی ایس پیز اور ایس ایچ او ز کے خلاف کارروائی عمل میں لائی جائے گی کھلی کچہری انعقاد کرنے کا مقصد بھی یہی ہے کہ عوام کی براہ راست ڈی آئی جی آفیس ایس ایس پی آفیس تک رسائی کو ممکن بنائی جائے کیونکہ پولیس عوام کے جان ومال کے تحفظ کو یقینی بنانے کی ذمہ دار ہے انہوں نے سات روز کے دوران ملزمان کی گرفتاری کا بھی حکم دے دیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں