8

امریکہ کے شام اور عراق میں شیعہ ملیشیا کتائب حزب اللہ کے اڈوں پر حملے، ایران کی مذمت

ایران نے عراق میں اپنی حمایت یافتہ شیعہ ملیشیا کے خلاف امریکی کارروائی کی مذمت کرتے ہوئے اسے ’کھلم کھلا دہشت گردی‘ اور عراقی سرزمین پر ’عسکری جارحیت‘ قرار دیا ہے۔

امریکہ نے اتوار کو عراق اور شام میں کتائب حزب اللہ نامی عسکریت پسند گروہ کے اڈوں پر حملے کیے اور ان کے بارے میں امریکہ کا کہنا ہے کہ یہ کارروائی اتحادی افواج پر حالیہ حملوں کے جواب میں کی گئی۔

خیال رہے کہ 27 دسمبر کو کرکوک میں ایک فوجی اڈے پر حملے میں ایک امریکی کنٹریکٹر ہلاک اور متعدد امریکی فوجی اور عراقی اہلکار زخمی ہوئے تھے۔

عراق میں اتوار کو ہونے والے فضائی حملے شام کی سرحد کے نزدیک واقع مشرقی ضلع القائم کے قریب ہوئے۔

امریکی وزیرِ دفاع مارک ایسپر کی جانب سے دعویٰ کیا گیا ہے کہ ان حملوں میں كتائب حزب الله کی اسلحے کے ذخیروں اور کمانڈ سنٹر کو نشانہ بنایا گیا۔ امریکہ کتائب حزب اللہ کو ایک دہشتگرد تنظیم قرار دے چکا ہے۔

عراق کے عسکری ذرائع کے مطابق ان حملوں میں شیعہ ملیشیا کے 25 ارکان ہلاک اور 50 سے زیادہ زخمی ہوئے۔

ایرانی خبر رساں ادارے اسنا کے مطابق وزارتِ خارجہ کے ترجمان عباس موسوی نے حملوں کی مذمت کرتے ہوئے امریکہ پر زور دیا ہے کہ وہ ’عراق کی خودمختاری اور علاقائی سالمیت کا احترام کرے اور اس کے اندرونی معاملات میں دخل اندازی بند کرے۔‘

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں